• yasinm 28w

    شبِ تاریک میں کچھ دیپ جلائے ہوتے
    کاش ہم نے بھی کوئی فرض نبھائے ہوتے

    کتنا آساں ہے یوں لوگوں سے شکایت رکھنا
    اپنے کاندھوں پہ سبھی بوجھ اٹھائے ہوتے

    ہم کہ چپ چاپ جھکے سامنے جو بت آیا
    حق تو یہ تھا کہ وہ بت ہم نے گرائے ہوتے

    اپنے انجام پہ ہم کو بھی فخر ہونا تھا
    دل گمانوں کی اگر زد میں نہ آئے ہوتے

    مانا نفرت کا تو ہے کام فنا کر دینا
    اجڑے کچھ شہر محبت نے بسائے ہوتے

    جب تھا معلوم جہاں توڑ کے رکھ دیتا ہے
    اپنے کچھ خواب زمانے سے بچائے ہوتے

    ایسی بے رنگ نہ ہوتی کبھی محفل اپنی
    روٹھے کچھ لوگ اگر خود ہی منائے ہوتے

    جان لے لیتے اسے شہر بدر کر دیتے
    سب ستم خود نہ اگر خود پہ یہ ڈھائے ہوتے