• hadias99 5w

    بدلتے ہوۓ رویے

    کچھ اَن کہے سے جملوں میں اور بے دھڑک سے رشتوں میں،
    کہیں رنجشیں بھی بستی ہیں!
    ہاں لفظوں میں چھپی ہوئ ،
    کچھ تلخیاں ابھرتی ہیں،
    کچھ رویوں میں بدلی ہوئ، وہ اَن جانی سی چال بھی،
    کچھ بولنے سے پہلے ہی، ہاں پُر تکلُف ہونے پر، مجبور سی کر دیتی ہیں، ان دلوں کے رشتوں کو،
    وہ راک کر دیتی ہیں، کچھ رویوں کے بدلنا ہی، عجب کام کرتا ہے، کِھلے ہوۓ سے پھولوں کو مُرجھا وہ دیتا ہے۔