• farhaaniyat 6w

    لاعنوان

    مجھے ستاروں سے سگریٹ سلگاتے
    کسی نہیں دیکھا

    مگر بادل تو تم بھی دیکھ سکتی ہو
    انہیں دھواں نہ کہنا
    ورنہ یہ اڑجائیں گے
    اور پھر سات سال بارش نہیں ہو گی
    یعنی میں سات سال تک نہیں ڈروں گا
    اور ماں پیاسی مرجائے گی
    (میری نظموں میں موت کا ذکر
    تمھارے تذکروں سے زیادہ ہے)
    میں بارش اور موت سے ڈرتا ہوں
    اور سگریٹ کا طویل کش بھر کے
    سانس روک لیتا ہوں
    یوں کسی کو بادل نظر آتے ہیں نہ دھواں،
    نہ چنگاری
    جس کا داخلا بارود کے گدام میں منع ہے
    ہماری پہلی ملاقات
    اس ہی گودام میں ہوئی تھی
    یہیں میں نے
    تمھاری رات جیسی آنکھوں میں
    آتش بازی کا پہلا مظاہرہ دیکھا تھا
    اور کان بند کر لئیے تھے
    روشنی کے تمام پھول جھڑنے کے بعد
    روشندان دیوار کے رنگ کا ہوگیا تھا
    تب تم دیوار کو پردہ کی طرح ہٹا کر
    میرے نزدیک آگئی تھی
    میں نے سگریٹ بجھا دیا تھا
    اور ایش ٹرے میں
    جلے بجھے ستارے
    پڑے رہ گئے تھے

    Read More

    Mujhe sitaaro se cigrrt sulgaate kisi ne nhi dekha

    Magar badal to tum bhi dekh skti ho
    Inhe dhuwaa na kehnaa
    Warna ye udh jayege
    Aur fir saat saal barish nhi hogi
    Yaani me 7 saal nhi dhoudogaa
    Yaani maa pyasi mar jayegi
    Meri nazmo me mout ka ziqr
    Tumhare tazkire se zyada hai

    Me barish aur mout se darta houn
    Aur cigrtt ka taweel kash bhar ke
    Saans rok leta houn
    Yu kisi ko badal nazar aate hai na
    Dhuwa na chingaari
    Jiska dhakhlaa barood ke godam me manaa hai
    Hamari pehli mulaqat issi gudan me hui thi
    Tumhaari raat jaisi ankho me
    Aatish baazi ka pehla nazara dekha
    Aur kaan band kr liye the
    Roshni ke tamam phool chrdne ke baad
    Roshan daan deewar ke rang ka ho gya tha
    Tab to deewar ko parde ki tarah hata kr mere qreeb aagyi thi
    Meine cigrrt bujhaai aur ash try me jale buje
    Sitaare padhe reh gye the